اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہاہے کہ کرپٹ لوگوں پر ہاتھ ڈالا جائے تو کہا جاتاہے کہ معیشت کو نقصان ہورہاہے ، پا کستان میں ہر وقت کچھ نہ کچھ ہورہا ہوتاہے ا س لئے جب بھی کوئی شہباز شریف جیسا آدمی گرفتار ہوگا تو ایسا تصور تو کیا جائے گا ہی ، شہبا ز شریف کے خلاف کیس ایک باقاعدہ عمل کے بعد یہاں تک پہنچا ہے ،شہبازشریف کی گرفتاری نیب کافیصلہ ہے،عمران خان وزیر اعظم کی حیثیت سے کسی مقدمے میں مداخلت نہیں کریں گے فواد چودھری نے کہا کہ پاکستان میں ہر وقت کچھ نہ کچھ ہورہا ہوتاہے ا س لئے جب بھی کوئی شہباز شریف جیسا آدمی گرفتار ہوگا تو ایسا تصور تو کیا جائے گا ہی ، شہبا ز شریف کے خلاف کیس ایک باقاعدہ عمل کے بعد یہاں تک پہنچا ہے ،شہبازشریف کی گرفتاری نیب کافیصلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ابھی تک سعد رفیق اور ان کے بھائی کے نام ای سی ایل میں نہیں ڈالے گئے لیکن اگرنیب کی جانب سے اس حوالے سے کوئی درخواست کی گئی تو وفاقی حکومت نیب سے تعاون کی پابند ہے ۔ انہوں نے کہا کہ عوام نے پاکستان کو تبدیلی کے لئے ووٹ دیاہے ، عمران خان وزیر اعظم کی حیثیت سے کسی مقدمے میں مداخلت نہیں کریں گے ، انہوں نے کہا کہ جو لوگ کرپشن میں ملوث ہیں وہ کیفر کردار تک پہنچیں گے ۔ نیب کی تفتیش کا اپنامعیار ہے اگر ان کو لگتاہے کہ تفتیش کیلئے گرفتاری ضروری ہے وہ گرفتار کرتے ہیں اور جہاں وہ محسوس کرتے ہیں گرفتاری کے بغیر کام چل سکتاہے وہ گرفتاری کے بغیر کام کرتے ہیں، نوازشریف اور مریم نواز کو فیصلہ آنے تک گرفتار نہیں کیا گیا تھا ،ان کا کہنا تھا کہ نیب ایک آزاد ادارہ ہے اور ہم نیب کے معاملات میں مداخلت نہیں کرسکتے ۔یہ پرانی کہانی ہے کہ اگر کرپٹ لوگوں پر ہاتھ ڈالنے کی کوشش کریں گے تو معیشت کونقصان ہوگا لیکن اب عوام کی اکثریت اس تصور کومسترد کرتی ہے اور آگے بڑھنا چاہتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ چند ماہ میں حکومتی فیصلوں کے کاروبار پر بہت مثبت اثرات مرتب ہونگے لیکن احتساب کے معاملے میں جو ایماندار کاروباری طبقہ ہے اس کو نہیں ڈرنا چاہئے لیکن جنہوں نے خلاف قانون کام کیاہے ان کوڈرنا چاہئے ۔