اسلام آباد:  سابق وزیراعظم نوازشریف کیخلاف احتساب عدالت میں فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت کچھ دیر کیلئے وقفہ کر دیا گیا ،عدالت نے نوازشریف کو جانے کی اجازت دیدی۔تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم نوازشریف کیخلاف احتساب عدالت میں فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت ہوئی ،نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث کی جگہ معاون وکیل عدالت میں پیش ہوئے،نیب کے تفتیشی افسرمحمدکامران بیان قلمبندکرارہے ہیں۔تفتیشی افسر محمد کامران نے بیان ریکارڈ کراتے ہوئے کہا کہ کمپنیزہاؤس اورایچ ایم لینڈرجسٹری کومتعلقہ ریکارڈدینے کی درخواست کی، درخواست پر ایڈریس پاکستانی ہائی کمیشن لندن کا دیا،تفتیشی افسرنے کہا کہ متعلقہ محکموں سے ریکارڈ کیلئے ٹیلی فون کے ذریعے پیروی کی، 24 اگست 2017کوڈائریکٹرنیب راولپنڈی کےساتھ پاکستانی ہائی کمیشن لندن گیا،کونسل اسسٹنٹ نے راؤعبدالحنان کے دفترسے 12 سربمہرلفافے لاکردیئے، راؤعبدالحنان ہائی کمیشن میں بطورویزہ اورکونسل اتاشی تعینات تھے،محمد کامران نے بتایا کہ میں نے ہائی کمیشن سے ریکارڈپرمشتمل 12 سربمہر لفافے وصول کئے ،ذکی الدین اورفردمقبوضگی کے گواہوں کے دفعہ 161 کابیان ریکارڈکیا۔عدالت نے فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت میں کچھ دیر کیلئے وقفہ کردیا ، عدالت نے سابق وزیراعظم نوازشریف کوجانے کی اجازت دے دی۔