واشنگٹن :  امریکہ میں تعینات سعودی عرب کے سفیر اور ولی عہد محمد بن سلمان کے سگے بھائی شہزادہ خالد بن سلمان نے ایران کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ انہوں نے ایران کو دہشتگردوں کا سب سے بڑا پشت پناہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایران اپنے جرائم کے حوالے دنیا کو دھوکہ دے رہا ہے۔ انہوں نے لبنان کے سابق وزیر اعظم رفیق حریری کے قتل کا ذمہ دار بھی ایران کو قرار دے دیا۔شہزادہ خالد بن سلمان نے شام اور عراق میں بے امنی کی وجہ ایران کو قرار دیا اور کہا کہ ایران کی مداخلت کی وجہ سے شام کے لاکھوں لوگوں نے جان سے ہاتھ دھوئے اور لاکھوں ہجرت پر مجبور ہوئے۔ عراق میں فرقہ واریت کو ہوا دینے میں ایران کا ہاتھ ہے۔ اپنے ملک میں سفارت خانوں پر بلوائیوں کے ذریعے حملے ایران کراتا ہے اور لبنان کے سابق وزیراعظم رفیق حریری کے قتل میں بھی ایران کا ہاتھ ہے۔ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں شہزادہ خالد بن سلمان نے کہا کہ ایران نے عرب ممالک کی پیٹھ میں چھرا گھونپنے کےلئے حزب اللہ تخلیق کی۔ خطے میں دہشت گردی اور ولایت فقیہ کے نظام کوپھیلانے کے لیے علاقائی عسکریت پسندوں کو گود لیا گیا اور ان کی مد کی گئی۔ عراق اور شام کے بخیے ادھیڑنے کے لیے فرقہ واریت کے بیج بوئے گئے۔شہزادہ خالد بن سلمان کا کہنا تھا کہ ایران خطے میں طویل عرصے سے خونی کھیل کھیل رہاہے۔ ایران نے حزب اللہ کے بعد یمن میں حوثی پیدا کیے تاکہ عرب ممالک کو ایک نئے خلفشار کا شکار کیا جائے مگر سعودی عرب نے یہ تہیہ کیا ہے کہ خطے میں ایک اور حزب اللہ کو سرنہیں اٹھانے دیا جائے گا۔